Google Search

تازہ ترین

Post Top Ad

Your Ad Spot

اتوار، 6 دسمبر، 2020

DNA ٹیسٹ نے خاتون کو شہزادی بنا دیا گیا

 

بیلجیئم کی کورٹ نے باون سالہ خاتون کو سابقہ بادشاہ کے ساتھ ڈی این اے میچ ہونے پر اسکی بیٹی قرار دیا اور اسے شہزادی کا درجہ دے دیا اب ان کو پرنسس آف بیلجیئم لکھا اور پکارا جائے گا۔

 

Prince of Belgium

عالمی میڈیا کے مطابق: بیلجیئم کی ایک پینٹر باون سالہ ایلفائن بوئیل نے کورٹ میں مقدمہ دائر کیا تھا کہ وہ ملک کے سابق بادشاہ البرٹ دوم کی حقیقی بیٹی ہیں لیکن وہ انہیں اپناتے نہیں ہیں۔ اس لیے کورٹ مجھ کو میرا حق اور وہ تمام اعزازات دے جو باقی شہزادوں اور شہزادیوں کو شروع سے حاصل ہیں۔

 

کورٹ نے خاتون کے اس دعویٰ پر مقدمہ کی سماعت کی منظوری دی اور خاتون کا DNA کرانے کا آرڈ دیا جو کہ بادشاہ سے میچ کرگیا جس پر کورٹ نے مدعی کو بادشاہ کی بیٹی تسلیم کر لیا اور انہیں شہزادی کے اعزازات سے نوازا اور تمام مراعات بھی دینے کا حکم دے دیا جب کہ بادشاہ کو مقدمہ میں آ نے والے تمام اخراجات بھی اپنی بیٹی کو ادا کرنا ہوں گے۔

ایلفائن بوئیل نے 1990 سے ہی یہ بات کہ رہی تھی کہ وہ بادشاہ کی ہی بیٹی ہیں مگر اب کی بار عدالت نے ڈی این اے کا حکم دے دیا. بادشاہ کی جانب سے پہلے ڈی این اے ٹیسٹ سے انکار کر دیا تھا تاہم جب عدالت نے انہیں روزانہ 5 ہزار 800 ڈالر جرمانہ عائد کرنے کو کہا اس کے بعد بادشاہ نے اس خاتون کو بیٹی تسلیم کر لیا۔

 

83 سالہ بادشاہ 1993 سے 2013 تک بیلجیئم پر حکومت کی اور پھر اپنے بیٹے شہزادہ فلپ کو یہ بادشاہ سونپ دی تھی۔ ان کی بیگم ملکہ پاؤلا نے اپنی آپ بیتی میں بادشاہ البرٹ کی بیٹی ہونے کا تذکرہ 1999 پہلی بار کیا تھا۔

کوئی تبصرے نہیں:

ایک تبصرہ شائع کریں

If you have any suggestion kindly let me know

Post Top Ad

Your Ad Spot